December 03, 2018
سنیں امی

سنیں امی

ماں بننا یقیناً زندگی کا یادگار تجربہ ہے لیکن اس تجربے سے پہلے کے نو ماہ بھی کم اہمیت کے حامل نہیں۔ ایک لڑکی کو جس لمحے خبر ملتی ہے کہ وہ ماں بننے والی ہے، اس وقت سے ہی وہ اپنا ہر فیصلہ بچے کی صحت کو مد نظر رکھتے ہوئے لیتی ہے۔ وہ جانتی ہے، اس کا ہر قدم بچے کی صحت سے جڑا ہے۔ اس لیے وہ ہر معاملے میں احتیاط کا دامن تھامے رکھتی ہے۔ اس دوران ذہن میں سوال آتا ہے کہ کیا اب صبح ایک پیالی چائے یا کافی پینا درست ہوگا؟ لیکن صحت سے متعلق یہ اہم سوالات صرف کھانے پینے کی اشیاء تک محدود نہیں۔ اس دوران ایسی چیزوں سے بھی احتیاط لازم ہے، جو آپ کی جلد کے ذریعے آپ کے جسم کا حصہ بن رہی ہیں اور آپ کو نقصان پہنچا رہی ہیں۔ میک اپ اور اسکن کیئر مصنوعات ان میں شامل ہیں۔ ماہرین کا خیال ہے، خواتین کے لیے یہ جاننے کی کوشش ضروری ہے کہ حمل کے دوران جو اجزاء وہ اپنی جلد کی حفاظت کے لیے استعمال کر رہی ہیں، وہ نقصان دہ کیمیائی اجزاء سے محفوظ ہوں۔ اس مسئلے سے بچنے کا سب سے بنیادی طریقہ تو یہ ہے کہ کوئی بھی میک اَپ یا اسکن کیئر مصنوعات استعمال کرنے سے پہلے خود سے سوال کیجئے، اس کے اجزاء کیا ہیں؟ کیا یہ معیاری اور حاملہ خواتین کے لیے محفوظ ہے؟ جب آپ مصنوعات پر توجہ دیں گی تو اس کے اجزاء جاننے اور اس کو محفوظ انداز میں استعمال کرنے کا ہنر بھی جان لیں گی۔
خواتین اکثر سوال کرتی ہیں کیا حمل کے دوران بالوں میں ڈائی کیا جا سکتا ہے؟ کیا لپ اِسٹک لگانا صحت کے لیے مناسب ہے؟ جو میک اَپ استعمال کر رہی ہیں کیا وہ مضر اجزاء سے پاک ہے؟ ماہرین کے مطابق خواتین کو حمل کے دوران اپنی جلد کی حفاظت پر خصوصی توجہ دینا چاہئے، لیکن اس سے بھی زیادہ قابل توجہ بات یہ ہے کہ مصنوعات کا انتخاب سوچ سمجھ کر کیا جائے۔
آئیے بہت جلد امی بننے والی خواتین کو چند ایسے کارآمد طریقے بتاتے ہیں، جن کی مدد سے حمل کے دوران ان کی جلد خوبصورت بھی نظر آئے گی اور ان کی صحت کو کوئی نقصان بھی نہ پہنچے گا۔
موئسچرائز کیجئے:جلد کو مناسب انداز میں موئسچرائز نہ کیا جائے تو یہ سخت، کھردری اور بے رونق ہوجاتی ہے۔ اس کی صحت کو برقرار رکھنے کے لیے روزانہ کوشش کی ضرورت ہوتی ہے۔ یاد رکھیں حمل کے دوران بھی جلد کی ضرورت وہی ہے، جو عام دنوں میں تھی۔ بس جس بات پر توجہ دینی ہے، وہ یہ ہے کہ اس ضرورت کو پورا کرنے کا طریقہ کیا ہے۔ خصوصی توجہ دیجئے، کہیں آپ کی بیوٹی روٹین میں ایسی مصنوعات تو شامل نہیں جو بچے کے لیے نقصان کا سبب بن سکتی ہے۔ سستی میک اَپ مصنوعات استعمال کرنے یا جلد پر نئے تجربے کرنے کے لیے یہ وقت مناسب نہیں۔ اس لیے بہتر ہے کہ ایسی چیزیں استعمال کی جائیں جو آزمودہ اور قابل بھروسہ ہوں۔ جلد پر کسی بھی قسم کا نیا لوشن، کریم، فیس پائوڈر، فائونڈیشن استعمال کرنے سے پہلے ڈاکٹر سے مشورہ کر لیجئے، وہ آپ کو باآسانی بتاسکیں گے کہ کون سی مصنوعات مناسب ہیں اور کن چیزوں کو فی الحال ترک کردینا بہتر ہے۔ یوں تو غیر معیاری مصنوعات کبھی بھی استعمال کرنا درست نہیں لیکن اس نازک موقع پر خاص خیال ضروری ہے۔ بہت سی مصنوعات کوPregnancy Safeبھی قرار دیا جاتا ہے۔ اس قسم کی اصلی اور معیاری مصنوعات آپ کے لیے اچھا انتخاب ثابت ہوں گی۔
جلد کی نمی برقرار رہے:ممکن ہے آپ کو جلد موئسچرائز کرنا اور جلد کی نمی برقرار رکھنے کی بات ایک ہی لگے لیکن یہ دو علیحدہ باتیں ہیں۔ موئسچرائز کرنے کا مطلب ہے کہ جلد پر ایسی مصنوعات استعمال کی جائیں جو جلد کی قدرتی تازگی برقرار رکھے اور اس کو بیرونی عوامل مثلاً دھوپ، خشک موسم اور دیگر سے بچنے میں مدد دے، جبکہ جلد کی نمی سے مراد یہ ہے کہ آپ کے جسم میں پانی کی کمی نہ ہو۔ جسم میں پانی اور اچھی غذائیت کی کمی، جلد کی نمی متاثر کرنے کا سب سے بڑا سبب ہوتی ہے۔ اس لیے نہایت ضروری ہے کہ آپ بیرونی مصنوعات کے ساتھ ساتھ اپنی غذا کا بھی خصوصی خیال رکھیں۔ جلد کی نمی کا خیال رکھنے کے لیے ہمارا مشورہ ہے کہ Essential Oils استعمال کیے جائیں۔ بس ایسے تیل سے احتیاط کیجئے گا جن میں معدنیات کی بڑی مقدار شامل ہوتی ہے۔
جلد کی ایکس فولی ایشن:صحت مند جلد کے لیے ایکس فولی ایشن نہایت اہم ہے بلکہ یہ کہنا زیادہ بہتر ہوگا کہ چمکتی دمکتی جلد حاصل کرنے کا ایک ہی طریقہ ہے اور وہ یہ کہ ہفتے میں دو سے تین بار ایکس فولی ایشن کی جائے، لیکن سوال یہ ہے کہ حمل کے دوران بہترین اور محفوظ ترین ایکس فولی ایٹر کون سا ہے؟ دنیا کا مہنگا ترین برانڈ بھی اس وقت استعمال کرنا مناسب قرار نہیں دیا جاسکتا کہ اس میں کچھ نہ کچھ کیمیائی اجزاء موجود ہوتے ہی ہیں۔ اس لیے ماہرین اور ڈاکٹرز کا مشورہ ہے کہ حاملہ خواتین قدرتی اجزاء پر مشتمل ایکس فولی ایٹر استعمال کریں۔ یہ گھر میں آسانی سے تیار کیا جاسکتا ہے۔ اس سے نقصان پہنچنے کا اندیشہ بھی نہیں ہوتا اور یہ جلد پر نرم اور ملائم تاثر بھی قائم کرتا ہے۔ قدرتی اجزاء سے بنا ایکس فولی ایٹر تیار کرنے کے لیے ایک پیالے میں بیکنگ سوڈا لیجئے، اس میں چند قطرے پانی اور ایک سے دو قطرے وٹامن ای آئل ڈال کر اچھی طرح ملا لیجئے۔ یہ پیسٹ بن جائے گا۔ اب چہرے کو نیم گرم پانی سے دھونے کے بعد نرمی سے چند منٹ مساج کیجئے۔ چہرے پر موجود دھول مٹی، آلودگی اور بے رونق مردہ جلد غائب ہوجائے گی اور آپ کسی چاند کی طرح چمکنے اور دمکنے لگیں گی۔
اسٹریچ مارکس:بچوں کی پیدائش کے بعد اکثر خواتین اسٹریچ مارکس سے پریشان ہوتی ہیں۔ بعد کی پریشانی سے بہتر ہے کہ ابھی سے ان پر توجہ دیجئے۔ پیٹ اور کمر کے حصے پر پیٹرولیم جیلی یا وٹامن ای آئل کا استعمال، جلد کو اسٹریچ مارکس کی سختی سے محفوظ رہنے میں مدد دے گا۔