December 03, 2018
یاسر شاہ… گھومتی گیند کے جادو، نئے ریکارڈ نئے ترازو

یاسر شاہ… گھومتی گیند کے جادو، نئے ریکارڈ نئے ترازو

پاکستان نے دوسرے ٹیسٹ میچ میں نیوزی لینڈ کو اننگ اور 16 رنز سے شکست دے کر سیریز 1-1 سے برابر کردی۔ پہلی اننگز میں حیرت انگیز اور ریکارڈ ساز کارکردگی کے بعد، یاسر شاہ دوسری اننگز میں بھی کامیاب بولر رہے، انہوں نے 6 کیوی کھلاڑیوں کو پویلین کا راستہ دکھایا، اس طرح انہوں نے میچ میں مجموعی طور پر 14 کھلاڑی آؤٹ کیے۔
نیوزی لینڈ کے خلاف دوسرے ٹیسٹ میچ میں مایہ ناز پاکستانی لیگ اسپنر یاسر شاہ نے شاندار بولنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے کئی ریکارڈز اپنے نام کر لیے۔ 2؍مئی 1986ء کو صوابی میں پیدا ہونے والے 32 سالہ یاسر شاہ اس میچ کے ذریعے اپنے کیریئر کی شاندار کارکردگی کے ساتھ سامنے آئے ہیں۔ دبئی میں کھیلے جانے والے ٹیسٹ میں میچ کے تیسرے دن نیوزی لینڈ کی ٹیم پاکستان کی پہلی اننگز کے اسکور 418 رنز کے جواب میں صرف 90رنز پر ڈھیر ہو گئی۔ نیوزی لینڈ کی بیٹنگ لائن کی تباہی کے ذمہ دار پاکستانی اسپنر یاسر شاہ تھے جنہوں نے 41رنز کے عوض 8 وکٹیں لے کر کیریئر کی بہترین بولنگ کی، جو دبئی میں کسی بھی بولر کی بہترین بولنگ کا ریکارڈ ہے۔ اس سے قبل یہ ریکارڈ ویسٹ انڈیز کے دویندرا بشو کے پاس تھا جنہوں نے دو سال قبل پاکستان کے خلاف 49 رنز کے عوض 8 وکٹیں لی تھیں۔ یاسر شاہ کی پہلی اننگز میں شاندار بولنگ کسی بھی پاکستانی بولر کی ٹیسٹ اننگز میں تیسری بہترین بولنگ کا ریکارڈ ہے جہاں ان سے قبل عبدالقادر اور سرفراز نواز 9، 9 وکٹیں لینے کا اعزاز رکھتے ہیں۔ تاہم یاسر شاہ نے ٹیسٹ کرکٹ کی تاریخ میں نیوزی لینڈ کے خلاف کسی بھی بولر کی بہترین بولنگ کا ریکارڈ قائم کردیا۔ ان سے قبل یہ ریکارڈ جنوبی افریقہ کے گوفی لارنس کے پاس تھا جنہوں نے 62-1961ء میں 53رنز کے عوض 8وکٹیں حاصل کی تھیں۔ نیوزی لینڈ کے اوپنرز نے اپنی ٹیم کو 50رنز کا عمدہ آغاز فراہم کیا جس کے بعد پوری ٹیم محض 40رنز کے اضافے سے پویلین لوٹ گئی۔ یہ ٹیسٹ کرکٹ کی تاریخ میں محض دوسرا موقع ہے کہ کسی ٹیم کے اوپنرز نے 50 رنز سے کم کا آغاز فراہم کیا، لیکن اس کے باوجود بقیہ 10وکٹیں 40 رنز کے اضافے پر گر گئی ہوں۔ اس سے قبل 2001ء میں بھی نیوزی لینڈ کی ٹیم کو اوپنرز نے 91رنز کا آغاز فراہم کیا تھا لیکن پھر بقیہ ٹیم 131رنز پر ڈھیر ہو گئی تھی۔ اس کے ساتھ ساتھ میچ میں ایک ایسا عالمی ریکارڈ بھی بنا جو آج تک نہیں دیکھا گیا تھا اور نیوزی لینڈ کے 4 سے 11نمبر کے بلے بازوں نے اپنی ٹیم کے رنز میں سب سے کم رنز کا اضافہ کیا۔ نیوزی لینڈ کے 4 سے 11 نمبر کے بلے بازوں نے اپنی ٹیم کے مجموعے میں محض 5 رنز جوڑے جو ٹیسٹ کرکٹ کی تاریخ میں عالمی ریکارڈ ہے، جو اس سے قبل سری لنکا کے پاس تھا جس کے بلے بازوں نے کل 8رنز جوڑے تھے۔ میچ میں نیوزی لینڈ کے 6 کھلاڑی صفر پر آؤٹ ہوئے اور ایک اننگز میں سب سے زیادہ کھلاڑیوں کے صفر پر آؤٹ ہونے کے عالمی ریکارڈ کو برابر کر دیا۔ اس سے قبل پاکستان، جنوبی افریقہ، بنگلہ دیش اور بھارت کی ٹیموں کے بھی 6 کھلاڑی ایک اننگز کے دوران صفر پر آؤٹ ہو چکے ہیں جو ایک عالمی ریکارڈ ہے۔ تاہم اس سب سے قطع نظر یاسر شاہ نے ٹیسٹ میچ کے تیسرے دن ایک ایسا منفرد ریکارڈ قائم کردیا جو پاکستان کرکٹ کی تاریخ میں کوئی بھی بولر نہ کر سکا۔ یاسر شاہ نے میچ کے تیسرے دن پہلی اننگز میں 8 وکٹیں لینے کے بعد دوسری اننگز میں بھی نیوزی لینڈ کے دو بلے بازوں کو چلتا کردیا اور اس طرح پاکستان کرکٹ کی تاریخ میں ایک دن میں 10وکٹیں لینے والے پہلے بولر بن گئے۔ بعدازاں پریس کانفرنس کے دوران یاسر شاہ کا کہنا تھا کہ دبئی ٹیسٹ میں نیوزی لینڈ کے 10 کھلاڑیوں کو آؤٹ کرنے کا پہلے ہی سوچ رکھا تھا۔ یاسر شاہ اب تک 31ٹیسٹ میچز میں 181 وکٹیں حاصل کرچکے ہیں۔ انہوں نے دو بار ٹیسٹ میچز میں 10،10وکٹیں حاصل کرنے کا کارنامہ انجام دیا ہے۔ یاد رہے کہ عبدالقادرنے 1987ء میں انگلینڈ کے خلاف لاہور ٹیسٹ میں 56 رنز کے عوض 9وکٹیں حاصل کی تھیں۔ سرفراز نواز بھی آسٹریلیا کے خلاف 1979ء میں 86رنز کے عوض 9 وکٹیں حاصل کرچکے ہیں۔ سابق کپتان عمران خان نے ٹیسٹ کرکٹ کی ایک اننگز میں 8 وکٹیں حاصل کرنے کا کارنامہ دو بار انجام دیا، سکندر بخت نے بھی اننگز میں آٹھ وکٹیں حاصل کیں، البتہ یاسر شاہ نے ان سے کم رنز کے عوض آٹھ وکٹیں اپنے نام کیں۔ 1973ء میں انتخاب عالم نے نیوزی لینڈ کے خلاف بہترین بولنگ کرتے ہوئے 52رنز دے کر 7 وکٹیں حاصل کی تھیں۔ یاسر نے 15ویں مرتبہ ایک اننگ میں پانچ وکٹیں حاصل کرنے کا اعزاز بھی حاصل کرلیا ہے۔
وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے لیگ اسپنر یاسر شاہ کو نیوزی لینڈ کے خلاف شاندار بولنگ پر مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ وہ یاسر شاہ کی مزید کامیابیوں کے لیے دعاگو ہیں۔
اس تاریخی میچ کا تیسرا دن جادوئی اتفاقات کا باعث رہا۔ دبئی کے انٹرنیشنل کرکٹ اسٹیڈیم میں جاری سیریز کے دوسرے ٹیسٹ کے تیسرے روز نیوزی لینڈ نے 24رنز بغیر کسی نقصان کے شروع کی۔ بارش کے باعث میچ کا آغاز تاخیر سے ہوا تاہم نیوزی لینڈ کی جانب سے پاکستان کی طرح ہی سست بیٹنگ کا مظاہرہ کیا جا رہا تھا۔ تاہم یاسر شاہ نے نیوزی لینڈ کے جیت راول کو 50کے مجموعی اسکور پر آؤٹ کرکے پاکستان کو پہلی کامیابی دلوائی۔ لیگ اسپنر نے تباہ کن بولنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے 61کے مجموعی اسکور پر اپنے ایک ہی اوور میں ٹام لیتھم، روس ٹیلر اور ہینری نکولس کی اننگز کا خاتمہ کرکے میچ پاکستان کی گرفت میں کر دیا۔ یاسر شاہ نے گھومتی ہوئی گیندوں میں مہمان ٹیم کے کھلاڑیوں کو الجھائے رکھا اور پوری ٹیم کو 90 رنز پر آل آؤٹ کر دیا۔ نیوزی لینڈ کے چھ بلے باز صفر پر آؤٹ ہوئے اور تمام تر بربادی کے ذمے دار یاسر شاہ تھے، جنہوں نے 41رنز کے عوض 8وکٹیں حاصل کیں۔ کیوی ٹیم فالو آن کا شکار ہوئی تو پاکستانی کپتان سرفراز احمد نے مہمان ٹیم کو دوبارہ بیٹنگ کی دعوت دی۔ دوسری اننگز میں بھی نیوزی لینڈ کا آغاز کچھ اچھا نہ تھا اور جیت راول ایک مرتبہ یاسر شاہ کی وکٹ بنے اور اسٹمپ ہو گئے۔ 10رنز پر پہلی وکٹ گرنے کے بعد ٹام لیتھم اور کین ولیمسن نے اسکور کو آگے بڑھانا شروع کیا اور 56رنز کی شراکت قائم کی لیکن 66کے مجموعے پر کین ولیمسن وکٹوں کے عقب میں اپنے ہم منصب کو کیچ دے بیٹھے۔ روس ٹیلر وکٹ پر آئے تو ابتدا میں انہیں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا جس کے بعد انہوں نے اپنا روایتی جارحانہ انداز اپنانے کا فیصلہ کیا اور یہ فیصلہ کسی حد تک درست ثابت ہوا۔ جب میچ کے تیسرے دن کا کھیل ختم ہوا تو نیوزی لینڈ نے دو وکٹوں کے نقصان پر 131رنز بنائے تھے۔ روس ٹیلر 53 گیندوں پر 49 اور لیتھم 44 رنز کے ساتھ وکٹ پر موجود ہیں جبکہ نیوزی لینڈ کو اننگز کی شکست سے بچنے کے لیے مزید 197رنز درکار ہیں۔ خیال رہے کہ میچ کے دوسرے روز پاکستان نے اپنی پہلی اننگز حارث سہیل اور بابراعظم کی شاندار سنچریوں کی مدد سے 5وکٹوں پر 418 رنز بنا کر ڈیکلیئر کردی تھی۔
دبئی انٹرنیشنل اسٹیڈیم میں کھیلے جانے والے ٹیسٹ کے چوتھے روز فالوآن کا شکار ہونے والی کیوی ٹیم نے 131 رنز 2 کھلاڑیوں آؤٹ پر کھیل کا آغاز کیا تو 44 رنز پر موجود لیتھم اپنے اسکور میں صرف 6 رنز کا اضافہ ہی کرسکے اور 146 کے اسکور پر کیوی ٹیم کی 3 وکٹیں گر گئیں۔لیتھم کے آؤٹ ہونے کے بعد روس ٹیلر اور اگلے آنے والے بیٹسمن ایم نیکولز نے کیوی ٹیم کا اسکور آگے بڑھایا لیکن 198 کے مجموعی اسکور پر روس ٹیلر بلال آصف کی گیند پر 82 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئے۔روس ٹیلر کے آؤٹ ہونے کے بعد اگلے آنے والے بیٹسمن نے نیوزی لینڈ کی ٹیم کا اسکور آگے بڑھایا اور کھانے کے وقفے تک کیوی ٹیم نے 4 کھلاڑیوں کے نقصان پر 222 رنز بنا لیے تھے۔کھانے کے وقفے کے بعد کھیل کا آغاز ہوا تو دونوں بلے باز اسکور کو آگے بڑھاتے رہے تاہم 255 کے مجموعی اسکور پر بی جے ویٹلنگ 27 رنز بنا کر پویلین لوٹ گئے۔اس کے بعد کیوی ٹیم کے کھلاڑی زیادہ دیر وکٹ پر نہ ٹھہر سکے اور یکے بعد دیگرے وکٹیں گرتی گئیں۔ 270 کے اسکور پر نیوزی لینڈ کا چھٹا کھلاڑی، 285 پر ساتواں، 301 پر آٹھواں جبکہ 311 پر نواں اور 312 پر آخری کھلاڑی آؤٹ ہوگیا۔دوسری اننگز میں یاسر شاہ نے 6، حسن علی نے 3 جبکہ بلال آصف نے ایک کھلاڑی کو آؤٹ کیا۔