January 14, 2019
جیا…حسن کی آنچ، اداؤں کا دیا

جیا…حسن کی آنچ، اداؤں کا دیا

جیا بخاری نے بہت کم عمری میں ٹی وی ڈراموں، کمرشلز اور ماڈلنگ کو اپنا اوڑھنا، بچھونا بنایا اور اب چھوٹی سی عمر میں ان کے پیچھے کم مگر اچھے کام کا وسیع تجربہ موجود ہے۔ اب سے آٹھ نو سال قبل سترہ سال کی یہ لڑکی جب شوبزنس میں داخل ہوئی تو اس نے صرف انٹر کر رکھا تھا۔ ڈرامہ سیریل ’’اُمید‘‘ میں ایک نسبتاً چھوٹے کردار سے جیا نے اپنے کیریئر کی ابتدا کی لیکن جس نے بھی پُرتاثر نقوش، تیکھے نینوں اور بھرپور فن کی حامل اداکارہ کو دیکھا، اس نے سمجھ لیا کہ آنے والے دنوں میں یہ لڑکی ایک ورسٹائل فنکارہ بن کر اُبھرے گی۔
15؍جنوری 1994ء کو پیدا ہونے والی جیا کا برج جدی (Capricorn) ہے۔ اُنہوں نے کراچی سے گریجویشن مکمل کیا اور ساتھ ہی ساتھ ایکٹنگ یا ماڈلنگ جیسے شوق کی آبیاری بھی جاری رکھی۔ اُنہوں نے فیشن شوٹس عکسبند کروانے میں بھی ملکہ حاصل کیا۔ ٹی وی پر ملنے والے کسی بھی کردار میں حقیقت کے رنگ بھرنا بھی سیکھ لیا اور چند سیکنڈز کے کمرشل میں بھی اپنی ایسی چھاپ چھوڑی کہ ایک بار دیکھنے والا اُنہیں بھول نہ سکے۔
حال ہی میں ان کا مقبول ترین سیریل ’’دل موم کا دیا‘‘ مقامی چینل سے ختم ہوا ہے جس میں ان کا سیکنڈ لیڈ رول تھا اور وہ نیلم منیر کی بہن کا کردار بڑی خوبی سے نبھا رہی تھیں۔ جس نے بھی اُنہیں اس کردار میں کاسٹ کیا تھا، اس کے حسنِ انتخاب کو بھی داد دینا چاہیے کہ نیلم منیر جیسی ہی لڑکی اس کام کے لیے ڈھونڈ نکالی۔
ان دنوں جیا کا ایک اور سیریل ’’میں محبت اور تم‘‘ بھی ایک نجی ٹی وی چینل پر آن ایئر ہے جس میں یاسر شورو اور فرح ندیم جیسے اداکاروں کے جھرمٹ میں جیا حقیقت سے قریب ترین اداکاری کرتی دیکھی جاسکتی ہیں۔ آج کل ایک کمرشل بینک کا اشتہار بھی ٹی وی پر چل رہا ہے، جس میں جیا نے ماڈلنگ کی ہے۔ ایک سال قبل جیا نے شادی کرلی، یعنی جیا پیا دیس سدھار گئیں مگر جیسا کہ عموماً ہوتا ہے کہ شادی کے بعد اچھی سے اچھی اداکارہ کو گھر بیٹھ کر ہانڈی چولہے کے جھمیلوں میں اُلجھنا پڑتا ہے، جیا کے ساتھ ایسا کچھ نہیں ہوا بلکہ شادی کے بعد ان کی فنی صلاحیتوں میں اور نکھار آیا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ جیا کے سپنوں کا راجہ یعنی ان کے شوہر نامدار طلحہ صاحب خود ایک ڈائریکٹر ہیں اور شادی سے پہلے ہی یہ طے ہوگیا تھا کہ جیا عام لڑکیوں کی طرح کسی بھی گھریلو پابندی سے آزاد رہ کر اپنا کام جاری رکھ سکیں گی۔ اگر شوہر کی طرف سے اداکاری اور ماڈلنگ پر کوئی پابندی نہ ہو تو عموماً نندیں، اپنی بھابی کے فنی سفر کی راہ میں ایک رکاوٹ بن جایا کرتی ہیں مگر یہاں بھی جیا قسمت کی دھنی نکلیں کیونکہ ان کی نند اروہا خان، خود بھی ایک اداکارہ ہیں۔ یوں حسن و ادا اور تخلیق کے گہوارے میں جیا کی صلاحیتوں کو بلاروک ٹوک نہ صرف جِلا مل رہی ہیں بلکہ جیا کے شوہر ہی ان کے بڑے سپورٹرز میں سے ایک ہیں۔
فن کی آنچ پر اداؤں کا دیا جل رہا ہے اور جیا ترقی کے سفر میں اگلی منزلوں کو پالینے کی جستجو میں ہیں۔ فلموں کے علاوہ ٹی وی اور کمرشلز میں جیا ہر نیا تجربہ کرنے کو تیار ہیں۔ بس فلم میں کام کرنے کیلئے وہ خود کو ذہنی طور پر کبھی آمادہ نہ کرسکیں، البتہ پاکستان میں بننے والی نئی فلموں، ان میں کام کرتے اداکاروں اور ڈائریکٹرز کے لیے مستقبل کی اچھی اُمیدیں، جیا کے ساتھ ہیں۔ جیا کو خوش رہنا بھی آتا ہے اور خوش رکھنا بھی وہ خوب جانتی ہیں۔ ان کی شادی کا جشن ایک ہفتے تک ساحر لودھی کے مارننگ شو میں براہِ راست منایا جاتا رہا۔ یوں ان کے مداحوں نے اپنی من پسند اداکارہ کو زندگی کے نئے سفر پر جانے کی ’’بدھائیاں‘‘ بھی دل کھول کر دیں۔ آنے والے دنوں میں جیا نے راتوں رات، شہرت کی بلندیاں چھو لینے کو اپنی ترجیحات میں کوئی جگہ نہیں دی ہے، وہ چاہتی ہیں، دھیرے دھیرے اوپر جایا جائے تاکہ پائدار ترقی ملے۔ فیشن اور گلیمر کی سیاست سے دور، جیا نے اپنے لیے علیحدہ راستے کا انتخاب کیا ہے، جہاں سب سے دوستی کا اصول کارفرما ہے۔