February 04, 2019
سرفراز، ون ڈے مقابلوں کی سنچری مکمل

سرفراز، ون ڈے مقابلوں کی سنچری مکمل

کنگز میڈ ڈربن میں پاکستان اور جنوبی افریقا کے درمیان کھیلا جانے والا دوسرا ون ڈے انٹرنیشنل، پاکستان کرکٹ ٹیم کے وکٹ کیپر کپتان سرفراز کا سواں ون ڈے انٹرنیشنل تھا۔ سرفراز ون ڈے کرکٹ میں پاکستان کے 159ویں کھلاڑی تھے، جنہوں نے 18؍نومبر 2007ء کو اپنا پہلا ون ڈے بھارت کے خلاف جے پور میں کھیلا تھا۔ سرفراز نے گیارہ سال میں پاکستان کے لیے 99ون ڈے میں 32.67کی اوسط سے 1895رنز دو سنچریوں اور 9نصف سنچریوں کی مدد سے اسکور کرنے کے ساتھ بطور وکٹ کیپر 96کیچ اور 23اسٹمپڈ کیے ہیں۔ سرفراز ون ڈے میچوں کی سنچری مکمل کرنے والے پاکستان کے چوتھے وکٹ کیپر ہیں۔ ان سے پہلے معین خان نے پاکستان کے لیے 219راشد لطیف نے 166اور کامران اکمل نے 157ون ڈے کھیلے ہیں۔ پاکستان کی جانب سے سب سے زیادہ 393ون ڈے کھیلنے والے شاہد خان آفریدی ہیں۔ سرفراز ون ڈے کرکٹ میں میچوں کی سنچری مکمل کرنے والے پاکستان کے 32ویں کھلاڑی ہیں۔ ون ڈے کرکٹ میں پاکستان کی جانب سے سو میچ مکمل کرنے والے پہلے کھلاڑی جاوید میانداد تھے۔17؍نومبر 1986ء کو جاوید میانداد نے ویسٹ انڈیز کے خلاف ملتان میں یہ اعزاز حاصل کیا تھا۔
قومی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے جنوبی افریقی آل راؤنڈر ایندائل فلکوایو سے ملاقات کر کے نسل پرستانہ جملے پر معذرت کر لی جسے انہوں نے قبول کر لیا۔ تیسرے ون ڈے میچ سے قبل قومی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے ایندائل فلکوایو سے ذاتی حیثیت میں ملاقات کر کے معذرت کی۔ اس موقع پر دونوں ٹیموں کے منیجرز بھی موجود تھے۔ سرفراز نے ٹوئٹ کرتے ہوئے بتایا کہ انہوں نے فلکوایوں سے ملاقات کرکے اپنے جملے پر معذرت کی جو انہوں نے قبول کر لی۔ سرفراز نے کہا کہ انہیں امید ہے کہ جنوبی افریقی عوام بھی درگزر سے کام لیں گے۔ خیال رہے کہ سرفراز احمد نے جنوبی افریقہ کے خلاف ایک روزہ سیریز کے دوسرے میچ میں متوقع شکست کو دیکھتے ہوئے غصے کے عالم میں جنوبی افریقہ کے آل راؤنڈر ایندائل فلکوایو پر نسل پرستانہ جملے کہے تھے جس کو براہ راست سنا گیا تھا۔ سرفراز نے میچ کی دوسری اننگز کے دوران ایندائل فلکوایو کو پکارتے ہوئے کہا کہ ’’ابے کالے، تیری امی کہاں بیٹھی ہوئی ہیں آج، کیا پڑھوا کے آیا ہے تو۔‘‘ قومی ٹیم کے کپتان کی یہ ویڈیو میچ کے فوراً بعد سوشل میڈیا پر وائل ہو گئی تھی اور انہیں پاکستانی شائقین کے ساتھ ساتھ سابق کرکٹرز نے بھی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا تھا۔ بعدازاں سرفراز احمد نے اپنے الفاظ پر معذرت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کا مقصد کسی کو نشانہ بنانا نہیں تھا جبکہ پی سی بی نے بھی ٹیم کے کپتان کی جانب سے نسل پرستانہ جملے کسنے پر افسوس کا اظہار کیا تھا۔ اس سے قبل جنوبی افریقی ٹیم کے کپتان فاف ڈیو پلیسی نے قومی ٹیم کے کپتان کی معذرت قبول کرتے ہوئے کہا تھا کہ ان کی ٹیم نے نسل پرستانہ جملے کسنے والے سرفراز احمد کو معاف کردیا ہے۔