تازہ شمارہ
Title Image
March 11, 2019

کیلشیئم کی کمی کیسے پوری ہو؟

مجھے Osteoarthritis ہے۔ مجھے کیلشیئم کی کمی پوری کرنے کے لئے روزانہ کتنا دودھ پینا چاہئے؟ میرا مشورہ ہے کہ آپ کو بالکل بھی دودھ نہیں پینا چاہئے۔ اگر آپ آرتھرائٹس کے مرض میں مبتلا ہیں یا کسی ایسے مسئلے کا شکار ہیں جس کی وجہ سے آپ کے جسم میں کیلشیئم کی کمی ہورہی ہے تو دودھ اور دودھ سے بنی چیزوں کا استعمال روک دیں۔ ایک کپ دودھ میں300ملی گرام کیلشیئم ہوتا ہے اور اس سے اندازہ کیا جاسکتا ہے کہ سارا دن کھائی جانے والی خوراک سے ہمیں کتنا کیلشیئم حاصل ہوتا ہے۔ مگر جو بات سمجھنے کی ہے وہ یہ ہے کہ دودھ پینے کے بعد ہمارے معدہ پر کیا اثر پڑ رہا ہے۔ ہر وہ چیز جو ہم کھاتے ہیں، ہمارے معدے پر دو میں سے ایک طرح کا اثر مرتب کرتی ہے یا تو اثر الکالائن (Alkaline) ہوتا ہے یا ایسڈک (Acidic) ۔ یہ اثرات ہمارے خون میں pH لیول کو متاثر کرتے ہیں۔ ہمارا جسمانی نظام الکالائن پی ایچ کے ساتھ مؤثر انداز میں کام کرتا ہے۔ جب جسم میں پی ایچ لیول تھوڑا سا بھی بڑھ جاتا ہے تو مختلف قسم کی سوزش اور انفیکشن، یہاں تک کہ کینسر کا خطرہ بھی پیدا ہوجاتا ہے۔ دودھ یا دودھ سے بنی دوسری چیزیں، جسم میں تیزابی اثرات پیدا کرتی ہیں اور ہمارا بلڈ پی ایچ لیول ایسڈک ہوجاتا ہے۔ دودھ میں لیکٹوز ہوتا ہے، دودھ میں قدرتی طور پر موجود چینی بھی بہت سے لوگوں کے لئے استعمال کرنا ٹھیک نہیں۔ خاص طور پر وہ لوگ جو انسولین، ذیابیطس اور وزن کی زیادتی وغیرہ کا شکار ہیں۔  میرا مشورہ ہے کہ آپ جسم میں کیلشیئم کی کمی پوری کرنے کے لئے دودھ کی بجائے میوہ جات، بیج، ہری سبزیاں، تل کے بیج، پھل (کینو اور چکوترہ) وغیرہ استعمال کیجئے۔ دوپہر کے کھانے میں پروٹین کی مقدار بڑھائیں، اس طرح آپ کی خوراک میں شامل کیلشیئم کو جسم میں جذب کرنے میں آسانی ہوگی۔کیلشیئم کے ساتھ ساتھ جسم میں وٹامن ڈی کی کمی بھی نہیں ہونا چاہئے۔ وٹامن ڈی کی کمی کی وجہ سے جسم، خوراک سے کیلشیئم جذب نہیں کرپاتا۔  (رشی چوہدری… ماہر غذائیات)